سوشل ڈسٹینسنگ شاعری ….. کوئی ہاتھ بھی نہ ملائے…

سوشل ڈسٹینسنگ شاعری
…..
کوئی ہاتھ بھی نہ ملائے گا جو گلے ملو گے تپاک سے
یہ نئے مزاج کا شہر ہے ذرا فاصلے سے ملا کرو
بشیر بدر
ایک ہی شہر میں رہنا ہے مگر ملنا نہیں
دیکھتے ہیں یہ اذیت بھی گوارہ کر کے
اعتبار ساجد
موت آ جائے وبا میں یہ الگ بات مگر
ہم ترے ہجر میں ناغہ تو نہیں کر سکتے
نامعلوم
اب نہیں کوئی بات خطرے کی
اب سبھی کو سبھی سے خطرہ ہے
جون ایلیا
یہ جو ملاتے پھرتے ہو تم ہر کسی سے ہاتھ
ایسا نہ ہو کہ دھونا پڑے زندگی سے ہاتھ
جاوید صبا
جان ہے تو جہان ہے دل ہے تو آرزو بھی ہے
عشق بھی ہو رہے گا پھر جان ابھی بچایئے
سعود عثمانی
دل تو پہلے ہی جدا تھے یہاں بستی والو
کیا قیامت ہے کہ اب ہاتھ ملانے سے گئے
ایمان قیصرانی
شام ہوتے ہی کھلی سڑکوں کی یاد آتی ہے
سوچتا روز ہوں میں گھر سے نہیں نکلوں گا
شہریار
گھر میں خود کو قید تو میں نے آج کیا ہے
تب بھی تنہا تھا جب محفل محفل تھا میں
شارق کیفی
ٹینشن سے مرے گا نہ کرونے سے مرے گا
اک شخص ترے پاس نہ ہونے سے مرے گا
ادریس بابر
یہ کہہ کے اس نے مجھے مخمصے میں ڈال دیا
ملاؤ ہاتھ اگر واقعی محبت ہے
جاوید صبا
حال پوچھا نہ کرے ہاتھ ملایا نہ کرے
میں اسی دھوپ میں خوش ہوں کوئی سایہ نہ کرے
کاشف حسین غائر
کچھ روز نصیر آؤ چلو گھر میں رہا جائے
لوگوں کو ی شکوہ ہے کہ گھر پر نہیں ملتا
نصیر ترابی
گھوم پھر کر نہ قتل عام کرے
جو جہاں ہے وہیں قیام کرے
شبیر نازش
بھوک سے یا وبا سے مرنا ہے
فیصلہ آدمی کو کرنا ہے
عشرت آفریں
افسوس یہ وبا کے دنوں کی محبتیں
اک دوسرے سے ہاتھ ملانے سے بھی گئے
سجاد بلوچ
اب تو مشکل ہے کسی اور کا ہونا مرے دوست
تو مجھے ایسے ہوا جیسے کرونا مرے دوست
ادریس بابر
گھر رہیے کہ باہر ہے اک رقص بلاؤں کا
اس موسم وحشت میں نادان نکلتے ہیں
فراست رضوی
بازار ہیں خاموش تو گلیوں پہ ہے سکتہ
اب شہر میں تنہائی کا ڈر بول رہا ہے
اسحاق وردگ
ممکن ہے یہی دل کے ملانے کا سبب ہو
ی رت جو ہمیں ہاتھ ملانے نہیں دیتی
ارشد جمال صارم
کوئی دوا بھی نہیں ہے یہی تو رونا ہے
صد احتیاط کہ پھیلا ہوا کرونا ہے
وجیہ ثانی
شہر گم صم راستے سنسان گھر خاموش ہیں
کیا بلا اتری ہے کیوں دیوار و در خاموش ہیں
اظہرنقوی
ایسی ترقی پر تو رونا بنتا ہے
جس میں دہشت گرد کرونا بنتا ہے
اسحاق وردگ
میں وہ محروم عنایت ہوں کہ جس نے تجھ سے
ملنا چاہا تو بچھڑنے کی وبا پھوٹ پڑی
نعیم ضرار احمد
ان دوریوں نے اور بڑھا دی ہیں قربتیں
سب فاصلے وبا کی طوالت سے مٹ گئے
اعتبار ساجد
مجھے یہ سارے مسیحا عزیز ہیں لیکن
یہ کہہ رہے ہیں کہ میں تم سے فاصلہ رکھوں
سعود عثمانی
اپنی مجبوری کو ہم دیوار و در کہنے لگے
قید کا ساماں کیا اور اس کو گھر کہنے لگے
شبنم رومانی
وصل کو موقوف کرنا پڑ گیا ہے چند روز
اب مجھے ملنے نہ آنا اب کوئی شکوہ نہیں
نامعلوم
اک بلا کوکتی ہے گلیوں میں
سب سمٹ کر گھروں میں بیٹھ رہیں
محمد جاوید انور
ہر ایک جسم میں موجود ہشت پا کی طرح
وبا کا خوف ہے خود بھی کسی وبا کی طرح
سعود عثمانی
شہر جاں میں وباؤں کا اک دور تھا
میں ادائے تنفس میں کمزور تھا
پلو مشرا
آپ ہی آپ دیے بجھتے چلے جاتے ہیں
اور آسیب دکھائی بھی نہیں دیتا ہے
رضی اختر شوق
اکیلا ہو رہ دنیا میں گر چاہے بہت جینا
ہوئی ہے فیض تنہائی سے عمر خضر طولانی
محمد رفیع سودا
کیسا چمن کہ ہم سے اسیروں کو منع ہے
چاک قفس سے باغ کی دیوار دیکھنا
میر تقی میر
کپڑے بدل کر بال بنا کر کہاں چلے ہو کس کے لیے
رات بہت کالی ہے ناصرؔ گھر میں رہو تو بہتر ہے
ناصر کاظمی
تھکنا بھی لازمی تھا کچھ کام کرتے کرتے
کچھ اور تھک گیا ہوں آرام کرتے کرتے
ظفر اقبال
قربتیں لاکھ خوبصورت ہوں
دوریوں میں بھی دل کشی ہے ابھی
احمد فراز
..

پیشکش عمر جاوید خان

Social distancing poetry
…..
No one will shake hands that you will hug him.
This is a city of new mood, meet me from a distance
Bashir Badr
I want to live in the same city but not to meet
Let's see after enduring this torture
Trust Sajid
Death may come in the epidemic, it is a different thing but
We can't make a nagger in your separation.
Unknown
Now there is no matter of danger
Now everyone is in danger from everyone
John Elia
This is what you keep shaking hands with everyone
Lest you have to wash your hands with life
Javed Saba
If there is life, then there is world, if there is heart, then there is
Love will also happen then save life now
Saud Usmani
The hearts were already separated, the people of the town.
What is the doomsday that now they have gone from shaking hands
Iman Qaisrani
As soon as evening comes, I remember the open roads.
I think everyday that I will not leave the house.
Shahriar
I have imprisoned myself at home today.
Even then I was alone when I was a gathering.
Sharq Kaifi
I will not die of tension, nor will I die of corona.
One person will die of not having you
Idris Babar
He put me in a velvet by saying this
Shake hands if really love
Javed Saba
Don't ask about my condition, don't shake hands
I'm happy in this sunshine, let no shade
Kashif Hussain Ghair
Come Naseer for a few days, let's stay at home
People complain that they are not found at home
Naseer Turabi
Don't roam around and do massacre
The one who is, stay there
Shabbir Nazish
Have to die of hunger or epidemic
The decision has to be made by the man
Ishrat Afreen
Alas, the love of these epidemic days.
They left even by shaking hands with each other
Sajjad Baloch
Now it is difficult to be someone else my friend
So I felt like Corona my friend
Idris Babar
Stay home, there is a dance of blossoms outside.
In this season of horror, fools come out.
Contemplate Rizvi
If the markets are silent, they can be on the streets.
Now the fear of loneliness is speaking in the city
Ishaq Verdag
It is possible that this is the reason for heart connecting
Y night that doesn't let us shake hands
Arshad strict beauty
There is no medicine, that's just crying
Be careful that Corona is spreading.
Witching II
The city is lost, the roads are deserted, the houses are silent.
What a problem has been revealed, why are the walls and doors silent?
Azhar Naqvi
You have to cry on such development
In which the terrorist becomes Corona
Ishaq Verdag
I am that deprived blessing who gave you
When I wanted to meet, the epidemic of separation spread.
Naeem Zararar Ahmed
These distances have increased the closeness
All distances have been erased by the length of the epidem
Trust Sajid
I love all these Messiahs but
They say I keep distance from you
Saud Usmani
We started calling our compulsion as walls and doors.
What was the prison stuff and they called it home
Shabnam Romani
The meeting has to be paused for a few days.
Now don't come to meet me, now I have no complaints.
Unknown
A bat is done in the streets.
Everyone stay together and sit at home
Muhammad Javed Anwar
Like the hashtap in every body
Fear of epidemic itself is like an epidemic
Saud Usmani
There was an era of epidemic in the city of life.
I was weak in the paid breathing
Pallu Mishra
The lamps are extinguished by themselves.
And the haunted doesn't even see
Riza Akhtar is fond of
Be alone in the world, even if you want to live a lot
Omar Khizar Tulani has become lonely.
Muhammad Rafi deal
What kind of garden is that captives are forbidden from us
Watching the garden wall from the chalk cage
Mir Taqi Mir
Where have you gone after changing clothes and making hair for whom?
The night is very dark, Nasir, it's better to stay at home.
Nasir Kazmi
It was necessary to get tired while doing some work.
Some more tired of relaxing
Zafar Iqbal
The closeness is so beautiful
There's a heartbreak even in distances right now
Ahmed Faraz
..

Presentation of Umar Javed Khan

Translated


جواب چھوڑیں