گھٹی گھٹی سی فضا میں شگفتگی تو ملی چمن میں شکر ہے…

گھٹی گھٹی سی فضا میں شگفتگی تو ملی
چمن میں شکر ہے ہنستی کوئی کلی تو ملی

بلا سے برق گری میرے آشیانے پر
اندھیری راہ کے رہرو کو روشنی تو ملی

رہا نہ شکوۂ بیچارگی ، کہ غربت میں
قدم قدم پہ سہارے کو بے کَسی تو ملی

ہمارے دل سے کوئی پوچھے قدر اس مے کی
جو ایک بُوند سہی وقتِ تشنگی تو ملی

سنبھل سنبھل کے مرے دل کو توڑنے والے
تری جفا میں محبت کی چاشنی تو ملی

کسی کا بھی نہ رکھا تھا خِرد نے اپنے سوا
جنوں کی راہ پہ چلنے سے آگہی تو ملی

نہ تھا نصیب میں گر سیم و زر تو کیا ساقی
درِ حبیب کی ہم کو گداگری تو ملی

(سید اولاد علی رضوی ساقی)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

I got a conversation in a little bit of atmosphere
Thankfully I found a smiling bud in the garden.

Lightning fell down on my nest
The guides of the dark path got light

There is no doubt in poorness or poverty.
The support at every step got helplessness

Someone ask our heart the value of this girl
When I was a drop, I got the thirst of time.

Be careful who breaks my heart
I found the relish of love in your love

The wise had not kept anyone except himself.
I came to walk on the path of the jinn.

If it was not in my fate then what is the bartender
We got the gudagari of the door of Habib.

(Syed children Ali Rizvi bartender)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated


جواب چھوڑیں