~ بلقیس ~ بلقیس۔۔ اے شہزادی! جلتی ہوئی ، قبائل…

~ بلقیس ~

بلقیس۔۔
اے شہزادی!
جلتی ہوئی ،
قبائلی جنگوں میں گھری
اپنی ملکہ کی رخصتی پہ
میں کیا لکھوں؟
بیشک،لفظ مُجھے الجھائے جاتے ہیں ۔۔۔
زخمیوں کے ایسے یہاں انبار دیکھوںMore
ٹوٹے ہوئے تاروں کے جیسے جسم
ٹوٹے ہوئے شیشے کے ٹکڑوں کے جیسے جسم
یہاں میں پوچھتا ہوں، اے مری محبوبہ:
کیا یہ تمھاری تُربت ہے ؟
یا عرب قوم پرستی دفن ہے ؟

مابعد امروز میں تاریخ نہیں پڑھوں گا،
میری انُگلیاں جل چکی ،
میری پوشاک
لہو سے لبریز ہے
یہاں سے ہم پتھر کے دور میں
داخل ہوئے جاتے ہیں
یہاں سے ہم
ہر گُزرتے دن کے ساتھ
ہزار سال پیچھے کو لوٹ رہے ہیں… More

May be an image of 2 people
بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2691246157772567

جواب چھوڑیں