وہی جوشِ حق شناسی وہی عزم بردباری نہ بدل سکا زم…

وہی جوشِ حق شناسی وہی عزم بردباری
نہ بدل سکا زمانہ مری خُوئے وضعداری

وہی مے کدہ ہے لیکن نہیں اب وہ کیف باری
گئے ہم مذاق لے کے مرا لطفِ بادہ خواری

ہو زبان جس کے منہ میں وہ نہ آئے انجمن میں
کہیں رکھ نہ دے ستم گر یہی شرطِ رازداری

کبھی ہنستے ہنستے رونا کبھی روتے روتے ہنسنا
کیا کوئی سمجھ سکے گا بھلا مصلحت ہماری

More

جواب چھوڑیں