پاگل ہوا کے دوش پہ جنسِ گراں نہ رکھ اس شہرِ بے لح…

پاگل ہوا کے دوش پہ جنسِ گراں نہ رکھ
اس شہرِ بے لحاظ میں اپنی دکاں نہ رکھ

اس کا دیا ہوا ہے جسم اس کے سپرد کر
رکھنے کی اس ہوس میں تو دونوں جہاں نہ رکھ

اس کا زوال دیکھ کے وہ سلطنت نہ چھوڑ
اس زندگی میں لمحۂ سود و زیاں نہ رکھ

وہ فصل پک چکی تھی اب اس کا بھی کیا قصور
تجھ سے کہا تھا جیب میں چنگاریاں نہ رکھ

More

جواب چھوڑیں