سہانی رات میں دلکش نظارے یاد آتے ہیں نہیں ہو تم …

سہانی رات میں دلکش نظارے یاد آتے ہیں
نہیں ہو تم مگر وہ چاند تارے یاد آتے ہیں

اُسی صورت میں دن ڈھلتا ہے سورج ڈوب جاتا ہے
اسی صورت سے شبنم میں ہر اک ذرہ نہاتا ہے
تڑپ جاتا ہوں میں جب دل ذرا تسکین پاتا ہے

اسی انداز سے مجھ کو سہارے یاد آتے ہیں
نہیں ہو تم مگر وہ چاند تارے یاد آتے ہیں

اکیلے میں تمہاری یاد سے بچ کر کہاں جاؤں؟
لبِ خاموش کی فریاد سے بچ کر کہاں جاؤں؟ …

More

جواب چھوڑیں