زوروں پہ بہت اب مری آشفتہ سری ہے یہ حال ہے خود س…

زوروں پہ بہت اب مری آشفتہ سری ہے
یہ حال ہے خود سے بھی مجھے بے خبری ہے

جب سے نہیں آغوش میں وہ جانِ تمنا
اک سل ہے کہ ہر وقت کلیجے پہ دھری ہے

ان کی جو میسر نہیں شاداب نگاہی
پھولوں میں کوئی رنگ نہ سبزے میں تری ہے

مانا کہ محبت کے ہیں دشوار تقاضے
بے یار کے جینا بھی تو اک درد سری ہے

More

جواب چھوڑیں