تو انگ انگ میں خوشبو سی بن گیا ہوگا میں سوچتا ہوں…

تو انگ انگ میں خوشبو سی بن گیا ہوگا
میں سوچتا ہوں کہ تجھ سے گریز کیا ہوگا

تمام رات مرے دل سے آنچ آتی رہی
کہیں قریب کوئی شہر جل رہا ہوگا

تو میرے ساتھ بھی رہ کر مرے قریب نہ تھا
اب اس سے اور فزوں فاصلہ بھی کیا ہوگا

مجھے خود اپنی وفا پر بھی اعتماد نہیں
کبھی تو تو بھی مری طرح سوچتا ہوگا

کبھی تو سنگِ ملامت کہیں سے آئے گا
کوئی تو شہر میں اپنا بھی آشنا ہوگا

ذرا سی بات پہ کیا دوستوں کے منہ آئیں
غریب دل تھا مروت میں جل بجھا ہوگا

(غلام جیلانی اصغر)

انتخاب :-: ابوالحسن علی ندوی

جواب چھوڑیں