نہیں اسے یہ گوارہ مَیں روشنی مِیں رہوں چراغ دیتا …

نہیں اسے یہ گوارہ مَیں روشنی مِیں رہوں
چراغ دیتا ہے جب بھی، بجھا کے دیتا ہے
خالد صدیقی
اک اور کھیت پکی سڑک نے نگل لیا
اک اور گاؤں شہر کی وسعت میں کھو گیا

یہ کیسی ہجرتیں ہیں موسموں میں
پرندے بھی نہیں ہیں گھونسلوں میں

بہت تنہا ہے وہ اونچی حویلی …

More

May be an image of one or more people and text

جواب چھوڑیں