روز کہاں سے کوئی نیاپن اپنے آپ میں لائیں گے تم ب…

روز کہاں سے کوئی نیاپن اپنے آپ میں لائیں گے
تم بھی تنگ آ جاؤ گے اک دن ہم بھی اکتا جائیں گے

چڑھتا دریا ایک نہ اک دن خود ہی کنارے کاٹے گا
اپنے ہنستے چہرے کتنے طوفانوں کو چھپائیں گے

آگ پہ چلتے چلتے اب تو یہ احساس بھی کھو بیٹھے
کیا ہوگا زخموں کا مداوا دامن کیسے بچائیں گے

وہ بھی کوئی ہم ہی سا معصوم گناہوں کا پتلا تھا
ناحق اس سے لڑ بیٹھے تھے اب مل جائے منائیں گے

More

جواب چھوڑیں