Warning: Use of undefined constant ‘ALLOW_UNFILTERED_UPLOADS’ - assumed '‘ALLOW_UNFILTERED_UPLOADS’' (this will throw an Error in a future version of PHP) in /home/moazam/public_html/wp-config.php on line 74
2019-01-10 - تفکر ڈاٹ کام
ڈیلی آرکائیو

2019-01-10

ابن انشا کی "اردو کی آخری کتاب” سے چند تحریریں ۔۔۔…

ابن انشا کی "اردو کی آخری کتاب" سے چند تحریریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہمارا تمھارا خدا بادشاہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کسی ملک میں ایک تھا بادشاہ۔ بڑا دانشمند،مہربان اور انصاف پسند۔اس کے زمانے میں ملک نے بہت ترقی کی اور…

شاد لکھنوی وصال یار سے دونا ہوا عشق مرض بڑھتا گیا…

شاد لکھنوی وصال یار سے دونا ہوا عشق مرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی .... نہ تڑپنے کی اجازت ہے نہ فریاد کی ہے گھٹ کے مر جاؤں یہ مرضی مرے صیاد کی ہے .... پانی پانی ہو خجالت سے ہر اک چشم حباب جو مقابل ہو مری اشک بھری آنکھوں سے .... جب…

ہر وقت یونہی شعر سنائے نہیں جاتے بے وجہ خزانے ت…

ہر وقت یونہی شعر سنائے نہیں جاتے بے وجہ خزانے تو لٹائے نہیں جاتے پانی کی ضرورت ہے محبت کے شجر کو پتھر پہ کبھی پیڑ اگائے نہیں جاتے احساس اگر ہو تو وفا پھولے پھلے گی دستور محبت کے سکھائے نہیں جاتے اپنے تو کسی درد کا احساس…

کلام لعل قلندر کبریا ~ نمی دانم کہ آخر چوں دمِ دی…

کلام لعل قلندر کبریا ~ نمی دانم کہ آخر چوں دمِ دیدار می رقصم مگر نازم بہ ایں ذوقے کہ پیشِ یار می رقصم نہیں جانتا کہ آخر دیدار کے وقت میں کیوں رقص کر رہا ہوں، لیکن اپنے اس ذوق پر نازاں ہوں کہ اپنے یار کے سامنے رقص کر رہا ہوں۔ بیا جاناں…

پاکستان سوشل سنٹر شارجہ کی ادبی کمیٹی کی تعارقی تقریب

معروف شاعر سلیمان چاذب کمیٹی کے سربراہ مقرر شارجہ (نمائندہ خصوصی ) پاکستان سوشل سنٹر شارجہ کی طرف سے ادب کے فروغ کے لئے ادبی کمیٹی کا قیام اور نوٹیفکیشن جاری سلیمان جاذب کمیٹی کے سربراہ ہوں گے تفصیلات کے مطابق پاکستان سوشل سنٹر شارجہ نے

وہ سرد فاصلہ بس آج کٹنے والا تھا میں اک چراغ کی …

وہ سرد فاصلہ بس آج کٹنے والا تھا میں اک چراغ کی لو سے لپٹنے والا تھا بہت بکھیرا مجھے مرے مہربانوں نے مرا وجود ہی لیکن سمٹنے والا تھا بچا لیا تری خوشبو کے فرق نے ورنہ میں تیرے وہم میں تجھ سے لپٹنے والا تھا اسی کو چومتا رہتا تھا…

جیسے سچ مُچ اُسی کو دیکھا ہے اس کی آواز ہے کہ …

جیسے سچ مُچ اُسی کو دیکھا ہے اس کی آواز ہے کہ چہرہ ہے جس نے چاہا ہے خود کو چاہا ہے میں بھی جھوٹا ہوں تو بھی جھوٹا ہے باہیں پھیلا رہے ہو کس کے لئے وہ تو خوشبو کا ایک جھونکا ہے جِس کی خاطر صبا ہے آوارہ میرے انفاس میں…

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…