ڈیلی آرکائیو

2019-01-23

کہاں رہے تِرا آوارہ سر، کہاں نہ رہے….. سیماب اکب…

کہاں رہے تِرا آوارہ سر، کہاں نہ رہے..... سیماب اکبرآبادی رہیں گے چل کے کہیں اوراگر یہاں نہ رہے بَلا سے اپنی جو آباد گُلسِتان نہ رہے ہم ایک لمحہ بھی خوش زیرِ آسماں نہ رہے غنیمت اِس کوسَمَجْھیے کہ جاوِداں نہ رہے ہمیں تو خود چَمن آرائی…

سقوطِ ڈھاکہ کی خبر سُن کر نصیر ترابی کی آنکھیں آنس…

سقوطِ ڈھاکہ کی خبر سُن کر نصیر ترابی کی آنکھیں آنسوؤں سے بَھر گئیں اور بے اختیار اِن اشعار نے غزل کی شکل لے لی۔ وہ ھمسفر تھا مگر اُس سے , ھم نوائی نہ تھی کہ دُھوپ چھاؤں کا عالم رھا , جدائی نہ تھی محبتوں کا سفر ، اِس طرح بھی گزرا تھا…

عالم تری نگہ سے ہے سرشار دیکھنا ۔ ماہ لقا چندا عا…

عالم تری نگہ سے ہے سرشار دیکھنا ۔ ماہ لقا چندا عالم تری نگہ سے ہے سرشار دیکھنا میری طرف بھی ٹک تو بھلا یار دیکھنا ناداں سے ایک عمر رہا مجھ کو ربط عشق دانا سے اب پڑا ہے سروکار دیکھنا گردش سے تیری چشم کے مدت سے ہوں خراب تس پر کرے ہے مجھ…

"”صدابصحرا”” چاروں سمت اندھیرا گھپ ہے اور گھٹا گھ…

🍁🍁""صدابصحرا""🍁🍁 چاروں سمت اندھیرا گھپ ہے اور گھٹا گھنگھور وہ کہتی ہے„کون___؟؟،، میں کہتا ہوں„میں____، کھولو یہ بھاری دروازہ مجھ کو اندر آنے دو___،، اس کے بعد اک لمبی چُپ اور تیز ہوا کا شور منیر نیازی از:-ایک اور دریا کا سامنا کُلیاتِ…

کچھ دوست مِل گئے ھیں یہاں ، اتفاق سے ملتے ھیں ورنہ…

کچھ دوست مِل گئے ھیں یہاں ، اتفاق سے ملتے ھیں ورنہ دوست کہاں ، اتفاق سے اے دوست خوش ھو ، مجھ سے تیری رسم و راہ ھے ملتا ھے اھلِ دل کا نشاں ، اتفاق سے تم آئے ، لب پہ حرفِ تمنا بھی آ گیا کُھلتی ھے اھلِ دل کی زباں ، اتفاق سے کوشش کے باوجود…

سحر ھُوئی بھی تو ، اُس کو یقیں نہ آئے گا جو بدنصیب…

سحر ھُوئی بھی تو ، اُس کو یقیں نہ آئے گا جو بدنصیب ، اُمیدِ سحر سے گزرا ھے یہ آھٹیں سی رگ و پے میں ، بے سبب تو نہیں کو ئی ضرور ، دلِ بے خبر سے گزرا ھے ”حفیظؔ ھوشیار پوری“ بشکریہ https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

اُداسی کو بیاں کیسے کروں مَیں خموشی کو زباں کیس…

اُداسی کو بیاں کیسے کروں مَیں خموشی کو زباں کیسے کروں مَیں بدلنا چاہتا ہُوں اِس زمیں کو یہ کارِ آسماں کیسے کروں مَیں بھروسہ ہی نہیں مجھ کو کسی پر کسی کو رازداں کیسے کروں مَیں شبِ دیجور ہے اور سوچتا ہُوں فلک کو کہکشاں کیسے…

گردشِ جامِ طرب ، یاد آئی گرمی صحبتِ شب ، یاد آئی …

گردشِ جامِ طرب ، یاد آئی گرمی صحبتِ شب ، یاد آئی آج جی کھول کے روئے ، اے دوست تیری صُورت بھی نہ جب ، یاد آئی یاد آئی تیری ھر ایک ادا اور بعنوانِ طرب ، یاد آئی حسرتِ لذت گفتار کے ساتھ تیری ھر جُنبشِ لب ، یاد آئی بارھا اُن کو بھی تنہائی…

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…