ڈیلی آرکائیو

2019-02-13

باتیں تو ختم نہیں ھوں گی، مگر مضمون کو ختم کرتے ھُ…

باتیں تو ختم نہیں ھوں گی، مگر مضمون کو ختم کرتے ھُوئے یہ تو کہنا ھی پڑے گا کہ زمانہ کتنی ھی کروٹیں بدلے ، جو لوگ فیض آشنا ھیں، جب جب وہ شعر و سخن میں نرم گفتاری کے تمنائی ھوں گے تو فیض ان کے لیے ایک منارۂ نور رھیں گے. اور اِس خوبصورت…

شکیل بدایونی نے ایک فلم کیلئے تاج محل پر ایک فلمی …

شکیل بدایونی نے ایک فلم کیلئے تاج محل پر ایک فلمی نغمہ لکھا تھا ؎ اک شہنشاہ نے بنوا کے حسیں تاج محل ساری دنیا کو محبت کی نشانی دی ہے اس کے سائے میں سدا پیار کے چرچے ہوں گے ختم جو ہو نہ سکے گی وہ کہانی دی ہے اک شہنشاہ نے بنوا کے حسیں…

نقشِ فریادی فیض کی لاجواب تخلیق ھے۔ غالب کے دیوان …

نقشِ فریادی فیض کی لاجواب تخلیق ھے۔ غالب کے دیوان کے پہلے شعر کا مصرعہ ”نقشِ فریادی ھے کس کی شوخی تحریر کا“ تھا یہ نام اُسی مصرعے سے لیا گیا۔ اُسی نقشِ فریادی سے چند نظمیں فیض کی اپنی آواز میں سنیں تو عجیب سی کیفیت طاری ھو جاتی ھے۔ آپ…

عطا شاد کا یومِ وفات یہ زندگی یہاں خوشی غموں کاسات…

عطا شاد کا یومِ وفات یہ زندگی یہاں خوشی غموں کاساتھ ساتھ ہے رُلا سکو تو ساتھ دو، ہنسا سکو تو ساتھ دو Feb 13, 1997 اردو اور بلوچی کے ممتاز شاعر اور ادیب عطا شاد 13 نومبر 1939ء کو سنگانی سرکیچ، مکران میں پیدا ہوئے تھے۔ عطا شاد کا اصل نام…

”فیض کے خطُوط ایلس کے نام“ ایلس کیتھرین جارج ایک …

”فیض کے خطُوط ایلس کے نام“ ایلس کیتھرین جارج ایک روشن خیال خاتون تھیں اُن کی بڑی بہن کی شادی ڈاکٹر تاثیر سے ھُوئی تھی جو اُن دِنوں امرتسر کے ایم اے او کالج میں پرنسپل تھے۔ وھیں امرتسر میں ڈاکٹر تاثیر کے یہاں پہلے بچے کی ولادت ھوئی تو مسز…

فیض احمد فیض کا یومِ وفات . کچھ محتسبوں کی خلوت م…

فیض احمد فیض کا یومِ وفات . کچھ محتسبوں کی خلوت میں ، کچھ واعظ کے گھر جاتی ہے ہم بادہ کشوں کے حصے کی ، اب جام میں کمتر جاتی ہے یوں عرض و طلب سے کب اے دل ، پتھر دل پانی ہوتے ہیں تم لاکھ رضا کی خو ڈالو ، کب خوئے ستمگر جاتی ہے بیداد گروں…

فیض احمد فیض کی پیدائش Feb 13, 1911 13 فروری 1911…

فیض احمد فیض کی پیدائش Feb 13, 1911 13 فروری 1911ء اردو کے خوب صورت لب و لہجے والے شاعر فیض احمد فیض کی تاریخ پیدائش ہے۔ فیض احمد فیض سیالکوٹ میں پیدا ہوئے تھے۔ وہ بلاشبہ اس عہد کے سب سے بڑے شاعر تھے۔ ایسے شاعر اور ایسے انسان روز روز…

شوخیاں مضطر , نگاہِ دیدۂ سرشار میں عشرتیں خوابیدہ …

شوخیاں مضطر , نگاہِ دیدۂ سرشار میں عشرتیں خوابیدہ رنگِ غازۂ رخسار میں سُرخ ھونٹوں پر تبسم کی ضیائیں جس طرح یاسمین کے پُھول ڈُوبے ھوں ، مئے گلنار میں ”فیض احمّد فیض“ بشکریہ https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…