ڈیلی آرکائیو

2019-04-12

ماہ پارہ صفدر …. یوں غم ذات کے نصاب میں ہوں گویا…

ماہ پارہ صفدر .... یوں غم ذات کے نصاب میں ہوں گویا بے نام اک عتاب میں ہوں تم کبھی جو کتاب زیست پڑھو مجھ کو پڑھنا ادھورے باب میں ہوں کانچ کے گھر تو یوں ہی ٹوٹتے ہیں پھر بھلا کیوں میں اضطراب میں ہوں جس کو پڑھنا نہیں گوارہ تمہیں بانج…

قمر رضا شہزاد کا یومِ پیدائش April 13, 19xx میں ن…

قمر رضا شہزاد کا یومِ پیدائش April 13, 19xx میں نے بھی تہمت تکفیر اٹھائی ہوئی ہے، ایک نیکی میرے حصے میں بھی آئی ہوئی ہے میرے کاندھوں پ دھرا ہے کوئی ہارا ہوا عشق، یہی گٹھری ہےجو مدت سے اٹھائی ہوئی ہے تم تو آئے ہو ابھی دشت محبت کی طرف،…

فارغ بخاری .. جنگل اگا تھا حد نظر تک صداؤں کا دیک…

فارغ بخاری .. جنگل اگا تھا حد نظر تک صداؤں کا دیکھا جو مڑ کے نقشہ ہی بدلا تھا گاؤں کا جسموں کی قید توڑ کے نکلے تو شہر میں ہونے لگا ہے ہم پہ گماں دیوتاؤں کا اچھا ہوا تہی ہیں زر بندگی سے ہم ہر موڑ پر ہجوم کھڑا ہے خداؤں کا صحرا کا…

جام چلنے لگے، دل مچلنے لگے، چہرے چہرے پہ رنگ شراب …

جام چلنے لگے، دل مچلنے لگے، چہرے چہرے پہ رنگ شراب آ گیا بات کچھ بھی نہ تھی، بات اتنی ہوئی آج محفل میں وہ بے نقاب آ گیا دل کشی کیا کہیں، نازکی کیا کہیں، تازگی کیا کہیں، زندگی کیا کہیں ہاتھ میں ہاتھ اس کا وہ ایسے لگا، جیسے ہاتھوں میں کوئی…

منیر نیازی خوبصُورتی اور بدصُورتی کو ظاھری آنکھ س…

منیر نیازی خوبصُورتی اور بدصُورتی کو ظاھری آنکھ سے نہیں دیکھتے تھے، اُن کے پاس مَن کے اندر چُھپی دِلکش مُورت اور من کے پیچھے چھپے عفریت کو پل میں تلاش کر لینے کا ھنر تھا۔. ”اللہ دی مخلوق“ اُچے اُچے محل بنا کے شیشیاں اوھلے ھَسدے وی…

میرے جیسے بن جاؤ گے جب عِشق تُمہیں ہو جائے گا دیوا…

میرے جیسے بن جاؤ گے جب عِشق تُمہیں ہو جائے گا دیواروں سے سر ٹکراؤگے جب عِشق تُمہیں ہو جائے گا ہر بات گوارا کرلو گے مَنّت بھی اُتارا کرلو گے تعویذیں بھی بندھواؤ گے جب عِشق تُمہیں ہو جائے گا تنہائی کے جُھولے جُھولو گے ہر بات پُرانی بُھولو…

منیر نیازی کے لفظوں اور نظموں کا اپنا موسم تھا۔ اُ…

منیر نیازی کے لفظوں اور نظموں کا اپنا موسم تھا۔ اُس کی اپنی کہانیاں تھیں ، بے انت کہانیاں. اُس کا جادُو سب کو ایسے شہرِ نامعلوم میں لے جاتا تھا جہاں سپنے باتیں کرتے ، پیڑ، پودے، درخت، پھل ، پُھول اپنے قصے سناتے۔ اور یوں لگتا کہ اُن کا…

تیری یادوں نے ، اگر ھاتھ بٹایا میرا اپنے ٹُوٹے ھُو…

تیری یادوں نے ، اگر ھاتھ بٹایا میرا اپنے ٹُوٹے ھُوئے خوابوں کی ، مُرمت کروں گا اب تیرے راز ، سنبھالے نہیں جاتے مجھ سے میں کسی روز ، اَمانت میں خیانت کروں گا ”تہذیب حافی“ بشکریہ https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…