ڈیلی آرکائیو

2019-06-01

وہ دن کب کے بیت گئے جب دل سپنوں سے بہلتا تھا گھر …

وہ دن کب کے بیت گئے جب دل سپنوں سے بہلتا تھا گھر میں کوئی آئے کہ نہ آئے ایک دیا سا جلتا تھا یاد آتی ہیں وہ شامیں جب رسم و راہ کسی سے تھی ہم بے چین سے ہونے لگتے جوں جوں یہ دن ڈھلتا تھا ان گلیوں میں اب سنتے ہیں راتیں بھی سو جاتی ہیں جن…

محبت کے موضوع پر چند اشعار …………………….

محبت کے موضوع پر چند اشعار .......................... محبت کرنے والے کم نہ ہوں گے تیری محفل میں لیکن ہم نہ ہوں گے زمانے بھر کے غم یا اک تیرا غم یہ غم ہو گا تو کتنے غم نہ ہوں گے (حفیظ ہوشیارپوری) ........... ہونٹوں پہ محبت کے فسانے نہیں…

تو بھی اب چھوڑ دے ساتھ اے غمِ دنیا میرا میری بستی…

تو بھی اب چھوڑ دے ساتھ اے غمِ دنیا میرا میری بستی میں نہیں کوئی شناسا میرا خلیل الرحمٰن اعظمیؔ کا یومِ وفات June 01, 1978 خلیل الرحمٰن اعظمیؔ 9 اگست 1927کو اعظم گڑھ* کے ضلع *سلطان پور* میں پیدا ہوئے ۔ان کے والد *مولانا محمد شفیع* جید…

بیٹھے بیٹھے کیسا دل گھبرا جاتا ہے زہرا نگاہ بیٹھے …

بیٹھے بیٹھے کیسا دل گھبرا جاتا ہے زہرا نگاہ بیٹھے بیٹھے کیسا دل گھبرا جاتا ہے جانے والوں کا جانا یاد آ جاتا ہے بات چیت میں جس کی روانی مثل ہوئی ایک نام لیتے میں کچھ رک سا جاتا ہے ہنستی بستی راہوں کا خوش باش مسافر روزی کی بھٹی کا…

دھوکا تھا ہر اک برگ پہ ٹوٹے ہوئے پر کا ماجد صدیقی …

دھوکا تھا ہر اک برگ پہ ٹوٹے ہوئے پر کا ماجد صدیقی دھوکا تھا ہر اک برگ پہ ٹوٹے ہوئے پر کا وا جس کے لیے رہ گیا دامان شرر کا میں اشک ہوں میں اوس کا قطرہ ہوں شرر ہوں انداز بہم ہے مجھے پانی کے سفر کا کروٹ سی بدلتا ہے اندھیرا تو اسے بھی…

اب تیری ضرورت بھی بہت کم ہے مری جاں اب شوق کا کچھ …

اب تیری ضرورت بھی بہت کم ہے مری جاں اب شوق کا کچھ اور ہی عالم ہے مری جاں اب تذکرۂ خندۂ گل بار ہے جی پر جاں وقفِ غمِ گریۂ شبنم ہے مری جاں رخ پر ترے بکھری ہوئی یہ زلفِ سیہ تاب تصویرِ پریشانئ عالم ہے مری جاں یہ کیا کہ تجھے بھی…