ڈیلی آرکائیو

2020-09-12

نہ ترا خدا کوئی اور ہے نہ مرا خدا کوئی اور ہے یہ …

نہ ترا خدا کوئی اور ہے نہ مرا خدا کوئی اور ہے یہ جو قسمتیں ہیں جدا جدا یہ معاملہ کوئی اور ہے ... صابر ظفر کی پیدائش Sep 12, 1949 صابر ظفر 12 ستمبر، 1949ء کو کہوٹہ، راولپنڈی، پاکستان میں عبدالرحیم کے گھر پیدا ہوئے۔ انہوں نے شاعری کی ابتدا…

ممتاز شیریں کا یومِ پیدائش September 12, 1924 ار…

ممتاز شیریں کا یومِ پیدائش September 12, 1924 اردو کی نامور نقاد‘ افسانہ نگار اور مترجم محترمہ ممتاز شیریں 12 ستمبر 1924ء کو ہندو پور (آندھراپردیش) میں پیدا ہوئی تھیں۔ ممتاز شیریں کے افسانوی مجموعوں میں اپنی نگریا‘ حدیث دیگراں اور میگھ…

خان صاحب کیا آپ کو آواز آرہی ہے؟ – سحرش عثمان

میں چپ ہوں اور مجھ سے کئی بے بس چپ ہے۔۔ خان صاحب کیا آپ کو آواز آرہی ہے؟ کیا آپ کو یہ خاموشی سنائی دے رہی ہے؟نصاب کی کسی کتاب میں چائنیز وزڈم پڑھی تھی کہ جب شہزادوں کی تربیت مقصود ہوتی تو بادشاہ یا بادشاہ گر اسے جنگلوں میں بھیج دیتے…

پرانے کھلاڑی نیا کھیل | Khabrain Group Pakistan

اے حق -لندنکرکٹ پوری پاکستانی عوام کا پسندیدہ ترین کھیل ہے جو ہر بچہ بڑا جوان کھےلنا بھی پسند کرتا ہے اور دیکھنا بھی ۔لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ بچپن سے ہم ایک نصیحت سنتے آ رہے تھے کہ پڑھو لکھو گے بنو نواب ،کھیلو گے کودو گے ہو

به قهوه خانه رفتم تا فراموش کنم عشقمان را و دفن …

به قهوه خانه رفتم تا فراموش کنم عشقمان را و دفن کنم اندوه خود را ٬ اما تو پدیدار شدی از فنجان قهوه ام گل رزی سفید نزار قبانی میں کافی شاپ میں داخل ہوا تاکہ تمہیں بھلا سکوں اپنے پیار کو اور تمہارے غم کو دفن کر دوں مگر میرے کافی کے…

پہلے یہ شکر کہ ہم حد ادب سے نہ بڑھے اب یہ شکوہ کہ…

پہلے یہ شکر کہ ہم حد ادب سے نہ بڑھے اب یہ شکوہ کہ شرافت نے کہیں کا نہ رکھا ... رئیس امروہوی کی پیدائش September 12, 1914 12 ستمبر 1914ء اردو کے نامور شاعر اور ادیب رئیس امروہوی کی تاریخ پیدائش ہے۔ رئیس امروہوی کا اصل نام سید محمد مہدی تھا…

مری دُعا ترے رخشِ صبا خرام کے نام! ہوا کے ہاتھ اس…

مری دُعا ترے رخشِ صبا خرام کے نام! ہوا کے ہاتھ اسے یہ پیام بھی پہنچے کہ میں نے اپنی محبت سپرد کی ہے تجھے سو دیکھ! میری امانت سنبھال کے رکھنا اِسے بہار کی نرماہٹوں نے پالا ہے سو اس کو گرم ہوا سے بہت بچا رکھنا یہ گُل عذار نہیں آشنائے سختئ…

~ اُس پار ~ میں دن کا صفحہ پلٹتے ہوئے وہی لکھنے …

~ اُس پار ~ میں دن کا صفحہ پلٹتے ہوئے وہی لکھنے لگتا ہوں تمُھارے ابُرو کی جنُبش جو مُجھے بتائے جاتی ہے تاریکی کی حقیقتیں لئے تُجُھ میں سمائے جاتا ہوں مُجھے تاریکی کے ثبوت چاہئیں سیاہ وائن پینے کی طلب ہے میری یہ آنکھیں لے لو اور انھیں…

روبرو مرزا غالب اور ستیہ پال آنند

قطرے میں دجلہ دکھائی نہ دے اور جزو میں کُلکھیل لڑکوں کا ہوا، دیدہ ٔ بینا نہ ہو ا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ستیہ پال آنندمیں نے دجلہ تو نہیں دیکھا، حضور ِ انوروسط مشرق میں کہیں ایک ندی ہے شایدآپ نے ذکر کیا ہے تو پھر دیکھی ہو گی مرزا غالبکیسی…