ماہانہ آرکائیو

دسمبر 2020

ملتوی کیے ہوئے خواب: اپنے خوابوں کو ہم معرض التوا…

ملتوی کیے ہوئے خواب: اپنے خوابوں کو ہم معرض التوا میں اگر ڈال دیں ان کا ہونا ہے کیا؟ دھوپ میں سوکھنے والے انگور دانوں کے مانند کیا خواب بھی خشک ہو جائیں گے؟ خواب زخموں کے پھوڑے سا پک جائیں گے؟ اور بہہ جائیں گے؟ خواب کیا گوشت کی طرح گل…

اردو ادب کی ممتاز شخصیت، استاد، افسانہ نگار، نقاد …

اردو ادب کی ممتاز شخصیت، استاد، افسانہ نگار، نقاد اور 100 سے زائد کتب کے مصنف ڈاکٹر سلیم اختر لاہور میں انتقال کر گئے۔ December 30, 2019 تفصیلات کے مطابق پاکستان کے نامور نقاد، افسانہ نگار، ماہرِ لسانیات، ماہرِ اقبالیات، ادبی مؤرخ، معلم…

تمہیں غیروں سے کب فرصت ہم اپنے غم سے کم خالی چلو …

تمہیں غیروں سے کب فرصت ہم اپنے غم سے کم خالی چلو بس ہو چکا ملنا نہ تم خالی نہ ہم خالی ... اڑ گئی پر سے طاقت پرواز کہیں صیاد اب رہا نہ کرے ... بھولتا ہی نہیں وہ دل سے اسے ہم نے سو سو طرح بھلا دیکھا ... جعفر علی حسرت 1734 - 1792 | لکھنؤ,…

شہد و شکر سے شیریں اردو زباں ہماری ہوتی ہے جس کے…

شہد و شکر سے شیریں اردو زباں ہماری ہوتی ہے جس کے بولے میٹھی زباں ہماری ... خواجہ الطاف حسین حالی کی وفات Dec 31, 1914 خواجہ الطاف حسین حالی 1837ء میں پانی پت میں پیدا ہوئے۔ انکے والد کا نام خواجہ ایزو بخش تھا - ابھی 9 سال کے تھے کہ والد…

857ء کے ناکام انقلاب سے متاثر ہو کر دلی کی بربادی …

857ء کے ناکام انقلاب سے متاثر ہو کر دلی کی بربادی پر مختلف شاعروں نے خاصی تعداد میں اشعار اور مرثیے کہے ہیں مگر حالیؔ نے 23 جو اشعار کہے ہیں۔ ان کی اردو میں کوئی مثال نہیں ملتی۔ ہر شعر درد و غم کی مکمل تصویر ہے۔ ؎ تذکرہ دہلی مرحوم کا اے…

A Mad Tea-Party by Carl Lewis ترجمہ صبغت وائیں …

A Mad Tea-Party by Carl Lewis ترجمہ صبغت وائیں 14 جنوری، 2016 گھر کے سامنے درخت کے نیچے ایک میز پڑا تھا، اور مارچؔ خرگوش اور ٹوپی والا ھیٹرؔ اس پر بیٹھے چائے پی رہے تھے: ان دونوں کے درمیان ایک ڈارماؤس چوہا بھی بیٹھا تھا، جو کہ گہری نیند…

موامبا کی یاد (نوبل انعام یافتہ جرمن ادیب ہیرمان …

موامبا کی یاد (نوبل انعام یافتہ جرمن ادیب ہیرمان ہَیسے کی برطانوی نوآبادیاتی دور کے عروج پر 1905ء میں لکھی گئی کہانی، جرمن سے براہ راست اردو ترجمہ: مقبول ملک) جب سے موسم انتہائی ابرآلود رہنے لگا تھا، جب سے مضحکہ خیز اور نشے کی حد تک مصرف…

ریت کی لہروں سے دریا کی روانی مانگے میں وہ …

ریت کی لہروں سے دریا کی روانی مانگے میں وہ پیاسا ہوں جو صحراؤں سے پانی مانگے تو وہ خود سر کہ الجھ جاتا ہے آئینوں سے میں وہ سرکش کہ جو تجھ سے ترا ثانی مانگے وہ بھی دھرتی پہ اتاری ہوئی مخلوق ہی ہے جس کا کاٹا ہوا انسان نہ…