ڈیلی آرکائیو

2021-02-11

سلسلہ تو کر قاصد اس تلک رسائی کا تمیزالدین تمیز د…

سلسلہ تو کر قاصد اس تلک رسائی کا تمیزالدین تمیز دہلوی سلسلہ تو کر قاصد اس تلک رسائی کا دکھ سہا نہیں جاتا یار کی جدائی کا جب ذرا مہک آئی شاخ میں لچک آئی باغباں کو دھیان آیا باغ کی صفائی کا فربہ تھا توانا تھا تیرا جانا مانا تھا ... More…