ڈیلی آرکائیو

2021-04-27

جیتے جی دکھ سکھ کے لمحے آتے جاتے رہتے ہیں ہم تو ذ…

جیتے جی دکھ سکھ کے لمحے آتے جاتے رہتے ہیں ہم تو ذرا سی بات پہ پہروں اشک بہاتے رہتے ہیں وہ اپنے ماتھے پر جھوٹے روگ سجا کر پھرتے ہیں ہم اپنی آنکھوں کے جلتے زخم چھپاتے رہتے ہیں سوچ سے پیکر کیسے ترشے سوچ کا انت نرالا ہے خاک پہ بیٹھے آڑے…